chief justice in video link 124

ویڈیو لنک سے عدالتی کاروائی، پاکستان دنیا کا پہلا ملک بن گیا- 25 لاکھ کی بچت

ویڈیو لنک سے سماعت کا آغاز

سپریم کورٹ جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے ای کورٹ نظام کے تحت مقدمات کی سماعت کرنے والی دنیا کی پہلی عدالت عظمی اور پاکستان پہلا ملک بن گیا- چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ ای کورٹ نظام کو پورے ملک میں پھیلائیں گے، اگلے مرحلے میں یہ نظام کوئٹہ رجسٹری میں شروع کریں گے- ٹیکنالوجی کی دنیا میں یہ بڑا قدم ہے اس نظآم سے وقت اور اخراجات دونوں کی بچت آج کے دن ای کورٹ ٹیکنالوجی کی مدد سے سائلین کے 20 سے 25 لاکھ روپے بچ گئے-

یہ خبر بھی پڑھیں: سکول کا کاروبار نہیں چل رہا تو کوئی اور بزنس کرلیں : چیف جسٹس آف پاکستان

کراچی رجسٹری ےسے براہ راست سماعت ہوئی

چیف جسٹس کی سربراہی میں جسٹس سردار طارق مسعود اور جسٹس مظہر عالم خان میاں خیل پر مشتمل 3 رکنی بینچ نے ای کورٹنظام کے تحت پہلے مقدمے کی سماعت کی جج صاحبان سپریم کورٹ اسلام آباد میں موجود رہے جبکہ کراچی رجسٹری میں ویڈیو لنگ کے ذریعے کیس کی سماعت کی گئی-

عدالتی عملہ اور سائیلین نے براہ راست کاروائی دیکھی

بی بی سی کے مطابق کراچی میں تین بڑی سکرینیں نصب کی گئی تھی- جن میں سے ایک سکرین پر چیف جسٹس اور بینچ کے دیگر جج صاحبان دیکھے جاسکتے تھے-جبکہ اسی سکرین کی دو مزید ونڈوز میں عدالتی عملہ اور سائلین نظر آرہے تھے اس طرح دیگر دو سکرینوں پر وکیل اور پبلک پراسکیوٹر کا عملہ موجود تھا – جن کو جج صاحبان دیکھ اور سن سکتے تھے-

چیف جسٹس کی نادرا اور متعلقہ حکام کو مبارک باد
سماعت کے دوران چیف جسٹس نے سپریم کورٹ کے عملہ ، نادرا اور متعلقہ حکام کو پہلی مرتبہ ویڈیو لنک کے ذریعے عدالتی کاروائی ہونے پر مبارکباد پیش کرے ہوئے کہا کہ دنیا کی تاریخ کا یہ پہلا نظام ہے جس نے پاکستان میں کام کرنا شروع کر دیا ہے جو وکلا اور سائلین کے لیے آسانیاں پیدا کرے گا اور وہ اپنی متعلقہ رجسٹری سے ویڈیو لنک کے زریعے کیس کی سماعت کراسکیں گے- ای کورٹ سے کم خرچ سے فوری انصاف ممکن ہوسکے گا اور سائلین پر مالی بوجھ بھی نہیں پڑے گا-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں